Emu- آسٹریلوی شتر مرغ

آسٹریلوی شتر مرغ
Emu in Parc Zoologique de Paris, France

The emu (Dromaius novaehollandiae) is the largest bird native to Australia and the only extant member of the genus Dromaius. It is the second-largest extant bird in the world by height, after its relative, the ostrich. There are three subspecies of emus in Australia. The emu is common over most of mainland Australia, although it avoids heavily populated areas, dense forest and arid areas.

The soft-feathered, brown, flightless birds reach up to 1.9 metres (6.2 ft) in height. They have long thin necks and legs. Emus can travel great distances at a fast, economical trot and, if necessary, can sprint at 50 km/h (31 mph). Their long legs allow them to take strides of up to 275 centimetres (9.02 ft) They are opportunistically nomadic and may travel long distances to find food; they feed on a variety of plants and insects, but have been known to go for weeks without food. Emus will sit in water and are also able to swim. They are curious birds who are known to follow and watch other animals and humans. Emus do not sleep continuously at night but in several short stints sitting down (Pics: Parc Zoologique de Paris, France)

آسٹریلوی شتر مرغ براعظم آسٹریلیا میں پایا جانے والا ایک نہ اڑ سکنے والا پرندہ ہے جو شتر مرغ کا قریبی رشتہ دار ہے اور جسامت میں اس قبیل کے پرندوں میں شتر مرغ کے بعد سب سے بڑا پرندہ ہے۔ یہ پرندہ تمام آسٹریلیا میں پایا جاتا ہے تاہم یہ آبادیوں سے کتراتا ہے اور زیادہ تر گھنے جنگلوں میں بسیرا کرتا ہے۔ یہ پرندہ 6 فٹ تک طویل ہو سکتا ہے جبکہ پچاس کلو میٹر فی گھنٹہ کی رفتار سے دوڑنے پر قادر ہے۔ اپنی لمبی ٹانگوں کی بنا پر یہ نو فٹ لمبی چھلانگ لگا سکتا ہے اور یہ بہت اچھا تیراک بھی ہے۔

آسٹریلوی شتر مرغ پودے اور کیڑے کھاتا ہے اور یہ پانی مل جائے تو پی لیتا ہے وگرنہ پانی کے بغیر بھی گزارہ کر سکتا ہے۔ آسٹریلوی شتر مرغ اپنی نیند ایک ہی باری میں مکمل نہیں کرتا بلکہ رات کو چھوٹے چھوٹے دورانیوں میں پوری کرتا ہے۔

Emu
آسٹریلوی شتر مرغ پیرس چڑیا گھر فرانس میں
آسٹریلوی شتر مرغ
Emu in Paris Zoo, France
Emu
آسٹریلوی شتر مرغ

 

 

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *

%d bloggers like this: